کرنسی کے اسلامی اصول




594256_183594

   فاریکس میں ٹریڈنگ کرنےکے بارے میں یہ سوال اور کرپٹو کرنسی مثلاً بٹکوائن، لٹکوان، ڈوجکوائن یا ڈیشکوائن ایکسچینجز پر یا ٹریڈنگ پلیٹ فارم پرحلال ھونے کی حثیت سے گردش کر رہا ہے۔ پاکستان ایک اسلامی ریاست ہونے کی وجہ  سے بٹکوائن اور زیادہ قبولیت کی طرف بڑہ رہا ہے اس حقیقت کیوجہ سےکہ قانون اور ریگولیشن نے پے پال سروسز کو پاکستان میں داخل ھونے سے ممکنہ حد تک نا ممکن بنا دیا ہے۔ باوجود اس کے کہ میں اس مضمون کا ماہر نہیں ہوں، کچھ صارفین نے کچھ دلچسپ پوسٹس بھیجی ہیں جن کے ساتھ میں متفق ہوں اور ان کو یہاں پوسٹ کر رہا ہوں۔  مہربانی فرما کر نوٹ کریں کہ یہ پوسٹ سٹاک ایکچینج کی طرف سے ہے۔

” بٹکوائن ایک روایتی نوٹ کی طرح کرنسی نہیں ہے لیکن یہ سونے اور چاندی وغیرہ جیسی چیز ہے، کچھ لوگ اس کو کرپٹو کمانڈٹی کا نام دیتے ہیں جو کہ بلاشبہ اندرونی طور پر جوابدہ ہے اورجو ضرورت کے وقت وجود میں لائی جاسکتی ہے۔ نوٹس کی شکل کی کرنسیوں کے لیے ناممکن ہے کہ وہ اندرونی طور پر ٹریس کی جا سکیں اور وہ لازمی طور پر معاہداتی کاغزات ہوتے ہیں جبکہ بٹکوائن اپنے اندر تمام ٹرانزیگشن کی ہسٹری ایک بڑے بٹکوائن فریم ورک میں رکھتے ہیں۔ اسلام ایک صرف کی جانے والی کمانڈٹی کے بارے میں احتساب چاہتا ہے، آپ ضرورت پوری کرنے کے لیے کرنسی نوٹوں کو ڈپلیکیٹ نہیں کر سکتے جیسا کہ بہت ساری حکومتیں کاغزی زر کی شکل میں کرتی ہیں بٹکوائن کے  اندر موجود احتسابی پن بٹکوائن کمانڈٹی کو ڈھونڈی جا سکنے والی کمانڈٹی  بناتا ہے جو کہ ضرورت پڑنے پر دوگنا نہیں کیا جا سکتا۔ حرام سے ھٹ کر میں یہ کہنا چاہوں گا کہ بٹکوائن ایک کرنسی ہے جو اسلام کے قوانین کے مطابق ہہت موزوں ہے، اسلام چاہتاہے کہ کرنسی کے اندر اس کی قدر موجود ہو، لیکن صرف کاغز کا ایک دستخط شدہ  ٹکڑا نہ ہو جس کی قدر بہت سارے حالات کی وجہ سے کھو سکتی ہے۔ بٹکوائن کے بارے میں ایک خوبی کی بات یہ ہے کہ یہ مرکزی بنک سے کنٹرول نہیں کیا جاتا اور آپ جو بھی بٹکوائن کائن کی شکل میں رکھتے ہیں اور جو کہ عملی طور پر مائن کیا گیا ہو۔ اس لیے اس کی کوئی اندرونی قیمت جو کہ کچھ بھی نہیں ہوتی لیکن نسبتاً اس مشکل کے طور جو اس کو مائن کرنے میں پیش آتی ہے۔ یہ بلکل ایسے ہی ہے جیسے حقیقی سونے کو مائن کیا جاتا ہے۔ ایک حقیقی کرنسی جس کی اسلام اجازت دیتا ہے وہ قدر میں نہ کمی ہونے والی فطرت رکھنے والی چیز ہے۔ مثال کے طور پر سونا جس کی قیمت ہمیشہ بڑہتی ہے۔ سونے کی قدر بڑھتی ہے کیونکہ سونے کی قیمت بڑھتی ہےکیونکہ اس کے زرائع کم ہیں اور سب کے سب استعمال کیے جاتے ہیں۔ جبکہ کاغزی کرنسی کی قدر ہمیشہ کم ہوتی ہے کیونکہ نئے نوٹ ضرورت زیادہ ہونے کی وجہ سے پرنٹ کیے جاتے ہیں اور اس طرح سے ہر نوٹ کی قدر کم ہوجاتی ہے۔  بٹکوائن کی مقدار بھی چند ملین تک محدود ہے اور اس کی قدر ہمیشہ بڑھتی ہے۔

میں یہ کہوں گا کہ بٹکوائن کا استعمال زیادہ حلال ہے اس کرنسی نوٹ کی نسبت جو ریزرو بینک کی طرف سے مہیا کی جاتی ہے۔” استعمال کنندہ 4841

میں دیکھتا ہوں کہ بٹکوائن کوئی روایتی کاغز پرمبنی کرنسی نہیں ہے۔  آپ اس کو پیپر والیٹ کی صورت میں لے کر جا سکتے ہیں تاکہ آپ اس کو کاغزی شکل دے سکیں، جبکہ اس کی ایک ریاضیاتی فارمولے کے زریعہ سے تصدیق کی جا سکتی ہے۔

ہمارا موجودہ مالی نظام سود پر مبنی معیشیت  ہے تو  ہماری اپنی کرنسی پاکستانی روپے کے ساتھ بٹکوائن کا موازنہ کرنا بلکل غلط ہوگا۔ بٹکوائن اور بلاک چین ایک کرنسی سے زیاد ہ ہیں اور ٹیکنالوجی کمانڈٹی یا ڈیجیٹل اثاثہ کے طور پر اسے دیکھا جا سکتا ہے۔ میں دیکھتا ہوں کہ بٹکوائن کی نسبت موجودہ فیٹ کرنسی زیادہ حرام ہے کیونکہ اس کا دارومدار اس بات پر ہے کہ ایک حکومت اس کو جتنی مقدارمیں اور جب بھی اس کی ضرورت ہو پرنٹ کر سکتی ہے۔ ہمیں یہ یاد رکھنا چاہیے کہ ایکو سسٹم صرف بڑھ رہا ہے، اور بٹکوائن کہاں ختم ہو گا کیونکہ یہ ابھی تک جانا ہی نہیں گیا، یہ بات  اور بھی اسکو پر تجسس بناتی ہے۔

فاریکس کمانڈٹی یا شیئرز کی ٹریڈنگ کرنا اس وقت تک حلال ہے جب تک آپ اس کو عملی طور پر وصول نہیں کرتے۔ جب کہ فاریکس اور کمانڈٹی میں عملی وصولی ممکن ہے۔  کمپنی کی طرف سے ممکن نہیں جبکہ آپ ایک سرٹیفیکیٹ حاصل کرتے ہیں جو اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ کمپنی میں آپ کے شیئرز کی تعدار اس قدر ہے۔  اس بات کو میں زھن میں رکھتے ہوئے سوچتا ہوں کہ اگر آپ سود پر مبنی سیٹ اپ کو بنیاد نہ بنائیں تو کرپٹو کرنسی میں ٹریڈنگ کرنا درست ہے۔  مجھے امید ہے اس سے بہت سی باتیں کلیئر ہو گئ ہوں گی جو آپ کے زہن کو شبہ میں ڈالتی ہیں۔

SUBSCRIBE TO OUR NEWSLETTER

Read previous post:
594256_183594
Principles Of Islamic Currency

The question of trading in Forex and trading crypto currencies such as bitcoin, litcoin, dogecoin or dash coin on exchanges...

Close